بیسک سیونگ بینک ڈپازٹ اکاؤنٹ پر ڈیجیٹل لین دین کے لیے چارجز نہیں لگیں گے: SBI

Reading Time: 2 minutes

ملک کے سب سے بڑے قرض دہندہ اسٹیٹ بینک آف انڈیا (State Bank of India) نے اس بات کا اعادہ کیا کہ وہ بیسک سیونگ بینک ڈپازٹ اکاؤنٹ (BSBD) کے تحت ڈیجیٹل لین دین کے لیے چارجز نہیں لگائے گا۔ اس میں یونیفائیڈ پیمنٹ انٹرفیس (UPI) اور روپے (RuPay) ڈیبٹ کارڈز کا استعمال کرتے ہوئے لین دین شامل ہیں۔

قرض دہندہ نے ایک ریلیز میں کہا کہ بیسک سیونگ بینک ڈپازٹ اکاؤنٹ کے تحت بینک  ڈیجیٹل لین دین استعمال کیے جانے پر کوئی چارجز عائد نہیں کرے گا۔ اس کا مقصد ڈیجیٹل لین دین کی معیشت کو فروغ دینا ہے-

اپنے بیان میں ایس بی آئی نے کہا کہ سنٹرل بورڈ آف ڈائریکٹ ٹیکسز نے 30 اگست 2020 کو بینکوں کو مشورہ دیا تھا کہ وہ یکم جنوری 2020 سے جمع کیے گئے چارجز کو واپس کر دیں، جن میں یوپی آئی اور روپے ڈیبٹ کارڈ سمیت مقررہ ڈیجیٹل ادائیگی کے طریقوں کا استعمال کیا گیا۔ اس نہ یہ بھی کہا ہے کہ اس طرح کے طریقوں سے کئے جانے والے مستقبل کے لین دین پر چارجز عائد نہ کریں۔

بیسک سیونگ بینک ڈپازٹ اکاؤنٹ کونسا اکاؤنٹ ہے؟

ایس بی آئی کی ویب سائٹ کے مطابق یہ اکاؤنٹ کوئی بھی فرد کھول سکتا ہے بشرطیکہ اس کے پاس درست کے وائی سی (KYC) دستاویزات ہوں۔ اس اکاؤنٹ کے ذریعہ بنیادی طور پر معاشرے کے غریب طبقات کو رقم جمع کرنے کی ترغیب دی جاتی ہے۔ تاکہ وہ بغیر کسی چارجز یا فیس کے بوجھ کے سیونگ شروع کریں۔

کیا ہیں اس کی خصوصیات؟

یہ اکاؤنٹ آر بی آئی کی تمام شاخوں میں دستیاب ہوتا ہے۔

کم از کم بیلنس کی رقم صفر۔

زیادہ سے زیادہ بیلنس/رقم کوئی اوپری حد نہیں۔

چیک بک کی کوئی سہولت دستیاب نہیں۔

صرف برانچوں میں یا اے ٹی ایم کے ذریعے فارم کا استعمال کرتے ہوئے رقم کی منتقلی ہوگی۔

بیسک روپے اے ٹی ایم کم ڈیبٹ کارڈ جاری کیا جائے گا۔