تین متنازعہ زرعی قوانین واپس لئے جائیں گے : وزیر اعظم مودی کا قوم سے خطاب۔

Reading Time: 2 minutes

زرعی قوانین کے خلاف قریب ایک سال تک کسانوں کے احتجاج کے بعد، وزیر اعظم نریندر مودی نے تین متنازعہ زرعی قوانین واپس لینے کا اعلان کیا ہے۔ مرکز نے گذشتہ سال ستمبر میں پارلیمنٹ میں تین زرعی قوانین کو منظور کیا تھا۔ وزیر اعظم مودی نے کسانوں سے معافی مانگی اور کہا کہ زرعی قوانین پر حکومت ‘ کسانوں کے ایک طبقے کو منانے میں ناکام رہی ہے۔ ‘ انہوں نے کہا کہ رواں مہینے پارلیمنٹ کے سیشن کے دوران تین متنازعہ قوانین کو منسوخ کردیا جائیگا۔

وزیر اعظم مودی نے قوم سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ‘ میں ہم وطنوں سے معافی مانگتا ہوں اور صدق دل سے یہ بتانا چاہوں گا کہ ہم کسانوں کے ایک طبقے کو راضی نہیں کرسکے۔ اور، آج میں یہ بتانے آیا ہوں کہ ہم نے تین زرعی قوانین کو واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس مہینے شروع ہونے والے پارلیمنٹ اجلاس سے قبل ہم ( تین زرعی قوانین ) کی منسوخی کی تمام تیاریاں کرلیں گے۔’

اس موقع پر وزیر اعظم مودی نے کسانوں کیلئے حکومت کی جانب سے شروع کی گئی اسکیموں اور اقدامات پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے کسانوں کی فلاح بالخصوص چھوٹے کسانوں کے تئیں حکومت کے عزم پر زور دیا۔

وزیر اعظم مودی کے قوم سے خطاب کی کچھ جھلکیاں :

پرکاش پورب تہوار کے موقع پرمیں دنیا بھر کی عوام کو مبارکبادی دیتا ہوں۔ یہ اسلئے بھی خوشی کا موقع ہیکہ ڈیڑھ سال کے وقفے کے بعد کرتارپور کوریڈور دوبارہ کھول دیا گیا ہے۔

اپنے کام کے 50 سالہ دور میں، میں نے کسانوں کو درپیش دشواریاں دیکھی ہیں۔ ملک کی عوام نے جب مجھے وزیر اعظم بنایا تو میں نے کسانوں کی ترقی کو کافی اہمیت دی۔

ملک بھر کے چھوٹے کسانوں کے مسائل کو دور کرنے کیلئے حکومت نے بینجوں، بیمہ، منڈیوں اور بچت پر مسلسل کام کیا ہے۔

فصل بیمہ اسکیم سے بھی کسانوں کو مدد ملی ہے۔ کسانوں کو ایک لاکھ کروڑ روپئے کا معاوضہ دیا گیا ہے، اسکے علاوہ بیمہ اور پنشن بھی فراہم کی گئی ہے۔

چھوٹی آبپاشی دوگنی کردی گئی ہے۔ فصل کے لون کوبھی دوگنا بڑھادیا گیا ہے۔ کسانوں کے حق میں سالانہ بجٹ بھی بڑھادیا گیا ہے۔

نیک ارادوں کے ساتھ تین زرعی قوانین بنائے گئے، تاہم، حکومت کسانوں کو منانے میں ناکام رہی۔ مرکز کی جانب سے کسانوں کو تین زرعی قوانین کی جانکاری دینے اور انہیں اسکے فوائد بتائے جانے کے باوجود، کسانوں کا ایک طبقہ ان قوانین کی مخالفت کررہا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں