Postal Ballot vs Remote Voting:کیا ہے ریموٹ ووٹنگ؟ پوسٹل بیالٹ اورریموٹ ووٹنگ میں کیا فرق ہے؟

Reading Time: 2 minutes

کیا پوسٹل بیالٹ اور ریموٹ ووٹنگ دو الگ الگ چیزیں ہیں؟

جی ہاں! پوسٹل بیالٹ اورریموٹ ووٹنگ میں فرق پایا جاتا ہے۔ حکومت ہند کے چند مخصوص زمروں کے ملازمین کو پوسٹل بیالٹ کے ذریعے اپنا ووٹ ڈالنے کی اجازت ہے۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے ان ملازمین میں بیالٹ کی پرچیاں تقسیم کی جاتی ہیں اور اہل ووٹرس بذریعہ ڈال اپنا ووٹ بھیجتے ہیں۔ الیکٹرانی ووٹنگ میشنوں کے ووٹوں سے قبل، پوسٹل بیالٹ ووٹوں کی گنتی کی جاتی ہے۔ حالیہ دنوں میں دہلی اور پنجاب کی حکومت نے ضعیف، اور کووڈ جیسے امراض کی وجہ سے آئی سولیشن میں رہنے والے ووٹروں کو پوسٹل بیالٹ کے ذریعے اپنا حق رائے دہی استعمال کرنے کی اجازت دی ہے۔

جبکہ ریموٹ ووٹنگ میں اپنے اپنے حلقوں سے دور دوسری ریاستوں میں مقیم تمام اہل ووٹروں کو ووٹ ڈالنے کی اجازت ہوگی۔ سال2021 کے آغاز میں چیف

 پوسٹل بیالٹ اورریموٹ ووٹنگ میں فرق پایا جاتا ہے۔(تصویر:Pixabay)
پوسٹل بیالٹ اورریموٹ ووٹنگ میں فرق پایا جاتا ہے۔(تصویر:Pixabay)

الیکشن کمشنر سنیل اروڑہ نے امید ظاہر کی تھی کہ 2024 کے لوک سبھا انتخابات تک ریموٹ ووٹنگ کی سہولت ممکن ہوجائیگی۔

مائگرںت مزدوروں کی میاپنگ

چیف الیکشن کمشنر سنیل اروڑہ نے واضح کردیا ہیکہ ریموٹ ووٹنگ کا ہرگز یہ مطلب نہیں کہ گھر سے دور دوسرے شہروں میں آباد رائے دہندے انٹرنیٹ کے ذریعے یا پھر اپنی قیام گاہ سے ووٹ دے سکیں گے۔ انتخابی کمیشن کے حکام ریموٹ ووٹنگ کو متعارف کرنے اور روڈ میپ بنانے کیلئے مائگرنٹ ورکروں کی میاپنگ کا منصوبہ بنارہے ہیں۔ مائگرنٹ مزدوروں کی آبادی کے ڈاٹا کا حاصل کرنے کے بعد کمیشن مستقبل میں ان علاقوں میں ریموٹ ووٹنگ مشینیں لگاکر ریموٹ ووٹنگ کا جائزہ لیگا۔ الیکشن کمیشن کا یہ اقدام ابھی ابتدائی مراحل میں ہے اور کمشین نے مرکزی وزارت قانون کو اپنی تجاویز سونپی ہے۔

ریموٹ ووٹنگ کی سہولت کو ممکن بنانے کیلئے الیکشن کمیشن کے حکام بلاک چین ٹکنالوجی پر آئی آئی ٹی مدراس کے ساتھ ملکر کام کررہے ہیں۔ آئی آئی ٹی بھیلائی کے ڈائریکٹر پروفیسر رجت مونا کی صدارت میں ایک تکنیکی مشاورتی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جس میں آئی آئی ٹی دہلی، آئی آئی ٹی بامبے، آئی آئی ٹی مدراس اور الیکشن کمیشن کے حکام شامل ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں